ایک نغمہ اک تارا ایک غنچہ ایک جام

ساغر صدیقی

ایک نغمہ اک تارا ایک غنچہ ایک جام

ساغر صدیقی

MORE BYساغر صدیقی

    ایک نغمہ اک تارا ایک غنچہ ایک جام

    اے غم دوراں غم دوراں تجھے میرا سلام

    زلف آوارہ گریباں چاک گھبرائی نظر

    ان دنوں یہ ہے جہاں میں زندگانی کا نظام

    چند تارے ٹوٹ کر دامن میں میرے آ گرے

    میں نے پوچھا تھا ستاروں سے ترے غم کا مقام

    کہہ رہے ہیں چند بچھڑے رہرووں کے نقش پا

    ہم کریں گے انقلاب جستجو کا اہتمام

    پڑ گئیں پیراہن صبح چمن پر سلوٹیں

    یاد آ کر رہ گئی ہے بے خودی کی ایک شام

    تیری عصمت ہو کہ ہو میرے ہنر کی چاندنی

    وقت کے بازار میں ہر چیز کے لگتے ہیں دام

    ہم بنائیں گے یہاں ساغرؔ نئی تصویر شوق

    ہم تخیل کے مجدد ہم تصور کے امام

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے