ہم سر زلف قد حور شمائل ٹھہرا

امیر مینائی

ہم سر زلف قد حور شمائل ٹھہرا

امیر مینائی

MORE BYامیر مینائی

    ہم سر زلف قد حور شمائل ٹھہرا

    لام کا خوب الف مد مقابل ٹھہرا

    دیدۂ تر سے جو دامن میں گرا دل ٹھہرا

    بہتے بہتے یہ سفینہ لب ساحل ٹھہرا

    کی نظر روئے کتابی پہ تو کچھ دل ٹھہرا

    مکتب شوق بھی قرآن کی منزل ٹھہرا

    نگہت گل سے پریشان ہوا اس کا دماغ

    خندۂ گل نہ ہوا شور عنادل ٹھہرا

    نجد سے قیس جو آیا مرے زنداں کی طرف

    دیر تک گوش بر آواز سلاسل ٹھہرا

    حسن جس طفل کا چمکا وہ ہوا باعث قتل

    جس نے تلوار سنبھالی مرا قاتل ٹھہرا

    خط جو نکلا رخ جاناں پہ ملا بوسۂ خال

    یہی دانہ فقط اس کشت کا حاصل ٹھہرا

    علم اک نقطہ جو مشہور تھا اے جوش جنوں

    غور سے کی جو نظر نقطۂ باطل ٹھہرا

    دور جب تک تھے تڑپتا تھا میں کیسا کیسا

    پاس آ کر وہ جو ٹھہرے تو مرا دل ٹھہرا

    کثرت داغ سے گلدستہ بنا دل تو کیا

    زینت باغ نہ آرائش محفل ٹھہرا

    دوڑتا قیس بھی آتا ہے نہایت ہی قریب

    اک ذرا ناقے کو اے صاحب محمل ٹھہرا

    دم جو بیتاب تھا مدت سے مرے سینے میں

    تیغ قاتل کے تلے کچھ دم بسمل ٹھہرا

    ہم بڑی دور سے آئے ہیں تمہارا ہے یہ حال

    گھر سے دروازے تک آنا کئی منزل ٹھہرا

    اب تک آتی ہے صدا تربت لیلیٰ سے امیرؔ

    ساربان اب تو خدا کے لیے محمل ٹھہرا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY