حسرت عہد وفا باقی ہے

ناصر شہزاد

حسرت عہد وفا باقی ہے

ناصر شہزاد

MORE BY ناصر شہزاد

    حسرت عہد وفا باقی ہے

    تیری آنکھوں میں حیا باقی ہے

    بات میں کہنہ روایات کا لطف

    ہاتھ پر رنگ حنا باقی ہے

    ابھی حاصل نہیں ظالم کو دوام

    ابھی دنیا میں خدا باقی ہے

    بجھ گیا گر کے خنک آب میں چاند

    سطح دریا پہ صدا باقی ہے

    گوپیاں ہی کسی گوکل میں نہیں

    بنسیوں میں تو نوا باقی ہے

    پاؤں کے نیچے سرکتی ہوئی خاک

    سر میں مسند کی ہوا باقی ہے

    بیچ میں رات، بچن، بیتے ملن

    اوٹ میں جلتا دیا باقی ہے

    دیکھ یہ چاند ندی پھول نہ جا

    رت میں رس شب میں نشہ باقی ہے

    ذریعہ:

    • Book: naquush (Pg. 292)
    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites