ہوا میں اڑتا کوئی خنجر جاتا ہے

زیب غوری

ہوا میں اڑتا کوئی خنجر جاتا ہے

زیب غوری

MORE BYزیب غوری

    ہوا میں اڑتا کوئی خنجر جاتا ہے

    سر اونچا کرتا ہوں تو سر جاتا ہے

    دھوپ اتنی ہے بند ہوئی جاتی ہے آنکھ

    اور پلک جھپکوں تو منظر جاتا ہے

    اندر اندر کھوکھلے ہو جاتے ہیں گھر

    جب دیواروں میں پانی بھر جاتا ہے

    چھا جاتا ہے دشت و در پر شام ڈھلے

    پھر دل میں سب سناٹا بھر جاتا ہے

    زیبؔ یہاں پانی کی کوئی تھاہ نہیں

    کتنی گہرائی میں پتھر جاتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY