جاں دینا بس ایک زیاں کا سودا تھا

زہرا نگاہ

جاں دینا بس ایک زیاں کا سودا تھا

زہرا نگاہ

MORE BYزہرا نگاہ

    جاں دینا بس ایک زیاں کا سودا تھا

    راہ طلب میں کس کو یہ اندازہ تھا

    آنکھوں میں دیدار کا کاجل ڈالا تھا

    آنچل پہ امید کا تارہ ٹانکا تھا

    ہاتھوں کی بانکیں چھن چھن چھن ہنستی تھیں

    پیروں کی جھانجھن کو غصہ آتا تھا

    ہوا سکھی تھی میری، رت ہمجولی تھی

    ہم تینوں نے مل کر کیا کیا سوچا تھا

    ہر کونے میں اپنے آپ سے باتیں کیں

    ہر پہچل پر آئینے میں دیکھا تھا

    شام ڈھلے آہٹ کی کرنیں پھوٹی تھیں

    سورج ڈوب کے میرے گھر میں نکلا تھا

    مآخذ
    • کتاب : Sham ka Pahla Tara (Pg. 96)
    • Author : ZEHRA NIGAAH
    • اشاعت : 1980

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY