جوانی مئے ارغوانی سے اچھی

ریاضؔ خیرآبادی

جوانی مئے ارغوانی سے اچھی

ریاضؔ خیرآبادی

MORE BYریاضؔ خیرآبادی

    جوانی مئے ارغوانی سے اچھی

    مئے ارغوانی جوانی سے اچھی

    بقا جس میں ہو شے وہ فانی سے اچھی

    ہمیں موت اس زندگانی سے اچھی

    جوانی ہو اچھی سی اچھی کسی کی

    نہ ہوگی تمہاری جوانی سے اچھی

    یہ مے شیخ کو نار دوزخ سے بڑھ کر

    یہ مے ہم کو جنت کے پانی سے اچھی

    ہمیشہ کو اب ہو گئی آنکھ موسیٰ

    صدا ہوگی کیا لن ترانی سے اچھی

    اگر پاسبانی ملے تیرے در کی

    تو خدمت نہیں پاسبانی سے اچھی

    ملا ٹوٹ کر ہم نے توبہ جو توڑی

    نبھی چند دن شیخ فانی سے اچھی

    نشانہ بنے دل رہے تیر دل میں

    نشانی نہیں اس نشانی سے اچھی

    تری خوش بیانی کا کیا ذکر واعظ

    خموشی تری خوش بیانی سے اچھی

    جوانی تو گزری بڑھاپے سے بد تر

    گزر جائے پیری جوانی سے اچھی

    جو الفت میں حاصل ہوئیں قیس تجھ کو

    یہ ناکامیاں کامرانی سے اچھی

    ریاضؔ آ رہو تم جو ساحر کے در پر

    رہے موت بھی زندگانی سے اچھی

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے