کتنی بے نور تھی دن بھر نظر پروانہ

شہزاد احمد

کتنی بے نور تھی دن بھر نظر پروانہ

شہزاد احمد

MORE BYشہزاد احمد

    کتنی بے نور تھی دن بھر نظر پروانہ

    رات آئی تو ہوئی ہے سحر پروانہ

    شمع جلتے ہی یہاں حشر کا منظر ہوگا

    پھر کوئی پا نہ سکے گا خبر پروانہ

    بجھ گئی شمع کٹی رات گئی سب محفل

    اب اکیلے ہی کٹے گا سفر پروانہ

    رات بھر بزم میں ہنگامہ ہی ہنگامہ تھا

    صرف خاموشی ہے اب نوحہ گر پروانہ

    ساری مخلوق تماشے کے لیے آئی تھی

    کون تھا سیکھنے والا ہنر پروانہ

    آسماں سرخ ہے سورج بھی ابھی ڈوبا ہے

    ابھی روشن نہ کرو رہ گزر پروانہ

    نہ سہی جسم مگر خاک تو اڑتی پھرتی

    کاش جلتے نہ کبھی بال و پر پروانہ

    شمع کیا چیز ہے جلتی تو کہاں تک جلتی

    ابھی زندہ ہے دل بے خطر پروانہ

    ہائے وہ حسن کہ جس کا کوئی مشتاق نہیں

    ہائے وہ شمع کہ ہے بے خبر پروانہ

    جس طرح گزرے گی یہ رات گزر جائے گی

    مدتوں یاد رہے گا اثر پروانہ

    ایک ہی جست میں طے ہو گئی منزل شہزادؔ

    کتنے آرام سے گزرا سفر پروانہ

    مأخذ :
    • کتاب : Deewar pe dastak (Pg. 402)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY