کام اب کوئی نہ آئے گا بس اک دل کے سوا

علی سردار جعفری

کام اب کوئی نہ آئے گا بس اک دل کے سوا

علی سردار جعفری

MORE BYعلی سردار جعفری

    کام اب کوئی نہ آئے گا بس اک دل کے سوا

    راستے بند ہیں سب کوچۂ قاتل کے سوا

    باعث رشک ہے تنہا رویٔ رہ رو شوق

    ہم سفر کوئی نہیں دورئ منزل کے سوا

    ہم نے دنیا کی ہر اک شے سے اٹھایا دل کو

    لیکن ایک شوخ کے ہنگامۂ محفل کے سوا

    تیغ منصف ہو جہاں دار و رسن ہوں شاہد

    بے گنہ کون ہے اس شہر میں قاتل کے سوا

    جانے کس رنگ سے آئی ہے گلستاں میں بہار

    کوئی نغمہ ہی نہیں شور سلاسل کے سوا

    RECITATIONS

    علی سردار جعفری

    علی سردار جعفری

    علی سردار جعفری

    کام اب کوئی نہ آئے گا بس اک دل کے سوا علی سردار جعفری

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY