کل وہ جو پئے شکار نکلا

میر محمدی بیدار

کل وہ جو پئے شکار نکلا

میر محمدی بیدار

MORE BYمیر محمدی بیدار

    کل وہ جو پئے شکار نکلا

    ہر دل ہو امیدوار نکلا

    جینے کی نہیں امید ہم کو

    تیر اس کا جگر کے پار نکلا

    ہم خاک بھی ہو گئے پر اب تک

    دل سے نہ ترے غبار نکلا

    جوں بام پہ بے نقاب ہو کر

    وہ ماہ رخ ایک بار نکلا

    اس روز مقابل اس کے خورشید

    نکلا بھی تو شرمسار نکلا

    غم خوار ہو کون اب ہمارا

    جب تو ہی نہ غم گسار نکلا

    تھے جس کی تلاش میں ہم اب تک

    پاس اپنے ہی وہ نگار نکلا

    ہر چند میں کی سرشک باری

    پر دل سے نہ یہ بخار نکلا

    بیدارؔ ہے خیر تو کہ شب کو

    جوں شمع تو اشک بار نکلا

    گزرا ہے خیال کس کا جی میں

    ایسا جو تو بے قرار نکلا

    مآخذ :
    • کتاب : intekhaab-e-sukhan(avval) (Pg. 99)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY