خنجر چمکا رات کا سینہ چاک ہوا

زیب غوری

خنجر چمکا رات کا سینہ چاک ہوا

زیب غوری

MORE BY زیب غوری

    خنجر چمکا رات کا سینہ چاک ہوا

    جنگل جنگل سناٹا سفاک ہوا

    زخم لگا کر اس کا بھی کچھ ہاتھ کھلا

    میں بھی دھوکا کھا کر کچھ چالاک ہوا

    میری ہی پرچھائیں در و دیوار پہ ہے

    صبح ہوئی نیرنگ تماشا خاک ہوا

    کیسا دل کا چراغ کہاں کا دل کا چراغ

    تیز ہواؤں میں شعلہ خاشاک ہوا

    پھول کی پتی پتی خاک پہ بکھری ہے

    رنگ اڑا اڑتے اڑتے افلاک ہوا

    ہر دم دل کی شاخ لرزتی رہتی تھی

    زرد ہوا لہرائی قصہ پاک ہوا

    اب اس کی تلوار میری گردن ہوگی

    کب کا خالی زیبؔ مرا فتراک ہوا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    خنجر چمکا رات کا سینہ چاک ہوا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY