خیال ناوک مژگاں میں بس ہم سر پٹکتے ہیں

بھارتیندو ہریش چندر

خیال ناوک مژگاں میں بس ہم سر پٹکتے ہیں

بھارتیندو ہریش چندر

MORE BYبھارتیندو ہریش چندر

    خیال ناوک مژگاں میں بس ہم سر پٹکتے ہیں

    ہمارے دل میں مدت سے یہ خار غم کھٹکتے ہیں

    رخ روشن پہ اس کی گیسوئے شب گوں لٹکتے ہیں

    قیامت ہے مسافر راستہ دن کو بھٹکتے ہیں

    فغاں کرتی ہے بلبل یاد میں گر گل کے اے گلچیں

    صدا اک آہ کی آتی ہے جب غنچے چٹکتے ہیں

    رہا کرتا نہیں صیاد ہم کو موسم گل میں

    قفس میں دم جو گھبراتا ہے سر دے دے پٹکتے ہیں

    اڑا دوں گا رساؔ میں دھجیاں دامان صحرا کی

    عبث خار بیاباں میرے دامن سے اٹکتے ہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Bhartendu Samagr (Pg. 269)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY