کھلی تھی آنکھ سمندر کی موج خواب تھا وہ

زیب غوری

کھلی تھی آنکھ سمندر کی موج خواب تھا وہ

زیب غوری

MORE BY زیب غوری

    کھلی تھی آنکھ سمندر کی موج خواب تھا وہ

    کہیں پتہ نہ تھا اس کا کہ نقش آب تھا وہ

    الٹ رہی تھیں ہوائیں ورق ورق اس کا

    لکھی گئی تھی جو مٹی پہ وہ کتاب تھا وہ

    غبار رنگ طلب چھٹ گیا تو کیا دیکھا

    سلگتی ریت کے صحرا میں اک سراب تھا وہ

    سب اس کی لاش کو گھیرے ہوئے کھڑے تھے خموش

    تمام تشنہ سوالات کا جواب تھا وہ

    وہ میرے سامنے خنجر بکف کھڑا تھا زیبؔ

    میں دیکھتا رہا اس کو کہ بے نقاب تھا وہ

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کھلی تھی آنکھ سمندر کی موج خواب تھا وہ نعمان شوق

    مآخذ:

    • کتاب : Zard Zarkhez (Pg. 106)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY