کچھ اجنبی سے لوگ تھے کچھ اجنبی سے ہم

انجم رومانی

کچھ اجنبی سے لوگ تھے کچھ اجنبی سے ہم

انجم رومانی

MORE BY انجم رومانی

    کچھ اجنبی سے لوگ تھے کچھ اجنبی سے ہم

    دنیا میں ہو نہ پائے شناسا کسی سے ہم

    دیتے نہیں سجھائی جو دنیا کے خط و خال

    آئے ہیں تیرگی میں مگر روشنی سے ہم

    یاں تو ہر اک قدم پہ خلل ہے حواس کا

    اے خضر باز آئے تری ہم رہی سے ہم

    دیتے ہیں لوگ آج اسے شاعری کا نام

    پڑھتے تھے لوح دل پہ کچھ آشفتگی سے ہم

    رہتی ہے انجمؔ ایک زمانے سے گفتگو

    کرتے نہیں کلام بظاہر کسی سے ہم

    مآخذ:

    • کتاب : Ghazalistaan (Pg. 292)
    • Author : Farkhanda Hashmi, Najeeb Rampuri
    • مطبع : Farid Book Depot ltd, New Delhi (2003)
    • اشاعت : 2003

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY