لکھی ہوئی جو تباہی ہے اس سے کیا جاتا

عزیز حامد مدنی

لکھی ہوئی جو تباہی ہے اس سے کیا جاتا

عزیز حامد مدنی

MORE BYعزیز حامد مدنی

    لکھی ہوئی جو تباہی ہے اس سے کیا جاتا

    ہوا کے رخ پہ مگر کچھ تو ناخدا جاتا

    جو بات دل میں تھی اس سے نہیں کہی ہم نے

    وفا کے نام سے وہ بھی فریب کھا جاتا

    کشید مے پہ ہے کیسا فساد حاکم شہر

    تری گرہ سے ہے کیا بندۂ خدا جاتا

    خدا کا شکر ہے تو نے بھی مان لی مری بات

    رفو پرانے دکھوں پر نہیں کیا جاتا

    مثال برق جو خواب جنوں میں چمکی تھی

    اس آگہی کے تعاقب میں ہوں چلا جاتا

    لباس تازہ کے خواہاں ہوئے ہیں ذرہ و سنگ

    اک آئنہ ہے کوئی دور سے دکھا جاتا

    عجب تماشۂ صحرا ہے چاک محمل پر

    غبار قیس ہے پردہ کوئی گرا جاتا

    جو آگ بجھ نہ سکے گی اسی کے دامن میں

    ہر ایک شہر ہے ایجاد کا بسا جاتا

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Aziz Hamid Madni (Pg. 478)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY