میں چھو سکوں تجھے میرا خیال خام ہے کیا

زیب غوری

میں چھو سکوں تجھے میرا خیال خام ہے کیا

زیب غوری

MORE BYزیب غوری

    میں چھو سکوں تجھے میرا خیال خام ہے کیا

    ترا بدن کوئی شمشیر بے نیام ہے کیا

    مری جگہ کوئی آئینہ رکھ لیا ہوتا

    نہ جانے تیرے تماشے میں میرا کام ہے کیا

    اسیر خاک مجھے کر کے تو نہال سہی

    نگاہ ڈال کے تو دیکھ زیر دام ہے کیا

    یہ ڈوبتی ہوئی کیا شے ہے تیری آنکھوں میں

    ترے لبوں پہ جو روشن ہے اس کا نام ہے کیا

    مجھے بتا میں تری خاک اب کہاں رکھ دوں

    کہ زیبؔ ارض و سما میں ترا مقام ہے کیا

    موضوعات:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY