موضوع سخن ہمت عالی ہی رہے گی

زیب غوری

موضوع سخن ہمت عالی ہی رہے گی

زیب غوری

MORE BYزیب غوری

    موضوع سخن ہمت عالی ہی رہے گی

    جو طرز نکالوں گا مثالی ہی رہے گی

    اب مجھ سے یہ دنیا مرا سر مانگ رہی ہے

    کمبخت مرے آگے سوالی ہی رہے گی

    وہ نشۂ غم ہو کہ خمار مے پندار

    دل والوں کے چہرے پہ بحالی ہی رہے گی

    اب تک تو کسی غیر کا احساں نہیں مجھ پر

    قاتل بھی کوئی چاہنے والی ہی رہے گی

    میں لاکھ اسے تازہ رکھوں دل کے لہو سے

    لیکن تری تصویر خیالی ہی رہے گی

    اس دل پہ ٹھہرنے کا نہیں زیبؔ کوئی نقش

    یہ آنکھ کسی رنگ سے خالی ہی رہے گی

    مأخذ :
    • کتاب : zartaab (Pg. 138)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY