ملا تو حادثہ کچھ ایسا دل خراش ہوا

اقبال ساجد

ملا تو حادثہ کچھ ایسا دل خراش ہوا

اقبال ساجد

MORE BY اقبال ساجد

    ملا تو حادثہ کچھ ایسا دل خراش ہوا

    وہ ٹوٹ پھوٹ کے بکھرا میں پاش پاش ہوا

    تمام عمر ہی اپنے خلاف سازش کی

    وہ احتیاط کی خود پر نہ راز فاش ہوا

    ستم تو یہ ہے وہ فرہاد وقت ہے جس نے

    نہ جوئے شیر نکالی نہ بت تراش ہوا

    یہی تو دکھ ہے برائی بھی قاعدے سے نہ کی

    نہ میں شریف رہا اور نہ بد معاش ہوا

    ہو ایک بار کا رونا تو روؤں بھی دل کو

    یہ آئنہ تو کئی بار پاش پاش ہوا

    بلا کا حبس تھا ساجدؔ ہوا کی بستی میں

    چلی جو سانس کی آری میں قاش قاش ہوا

    ذریعہ:

    • Book: kulliyat-e-iqbaal sajid (Pg. 305)
    • Author: iqbaal sajid
    • مطبع: Jung Publishers (1994)
    • اشاعت: 1994
    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites