مدت ہوئی ہے یار کو مہماں کیے ہوئے

مرزا غالب

مدت ہوئی ہے یار کو مہماں کیے ہوئے

مرزا غالب

MORE BY مرزا غالب

    INTERESTING FACT

    غزل کے ایک شعر 'دل ڈھونڈھتا ہے پھر وہی فرصت کے رات دن' کا استعمال گئلزار نے اپنی فلم موسم ( 1975 ) میں کیا

    مدت ہوئی ہے یار کو مہماں کیے ہوئے

    جوش قدح سے بزم چراغاں کیے ہوئے

    Its been long, since my lover, was a guest of mine

    and my house was suffused with the glow of wine

    کرتا ہوں جمع پھر جگر لخت لخت کو

    عرصہ ہوا ہے دعوت مژگاں کیے ہوئے

    I again amass the shards of my heart somehow

    Ages since I've feasted on her eyelashes now

    پھر وضع احتیاط سے رکنے لگا ہے دم

    برسوں ہوئے ہیں چاک گریباں کیے ہوئے

    The demands of decorum cause me great torment

    Long past since my collar, in my craziness I rent

    پھر گرم نالہ ہائے شرربار ہے نفس

    مدت ہوئی ہے سیر چراغاں کیے ہوئے

    Lament longs that from my breath may sparks of fire flow

    lts been a while since on a journey, of lights I did go

    پھر پرسش جراحت دل کو چلا ہے عشق

    سامان صدہزار نمکداں کیے ہوئے

    Love proceeds to console my wounded heart again

    While carrying with it quantities of salt for to rub in

    پھر بھر رہا ہوں خامۂ مژگاں بہ خون دل

    ساز چمن طرازی داماں کیے ہوئے

    The quill of my eyelashes I, dip in my blood anew

    For to decorate my vest in the flower's form and hue

    باہم دگر ہوئے ہیں دل و دیدہ پھر رقیب

    نظارہ و خیال کا ساماں کیے ہوئے

    My heart and my eyes are now adversaries again

    One seeks to think of her, the other for her sight to gain

    دل پھر طواف کوئے ملامت کو جائے ہے

    پندار کا صنم کدہ ویراں کیے ہوئے

    My heart repeatedly repairs to those avenues

    Where I will lose all self respect, be subject to abuse

    پھر شوق کر رہا ہے خریدار کی طلب

    عرض متاع عقل و دل و جاں کیے ہوئے

    Love once again is eager for a customer to find

    Offering up all the wealth of heart, life and mind

    دوڑے ہے پھر ہر ایک گل و لالہ پر خیال

    صد گلستاں نگاہ کا ساماں کیے ہوئے

    My thoughts do flit at every beauty, tulip be or rose

    A hundred gardens in my eyes, find easy repose

    پھر چاہتا ہوں نامۂ دل دار کھولنا

    جاں نذر دل فریبی عنواں کیے ہوئے

    Again I'd like to unseal the missive from my lover

    My life's forfeit, at the alluring, title on the cover

    مانگے ہے پھر کسی کو لب بام پر ہوس

    زلف سیاہ رخ پہ پریشاں کیے ہوئے

    Desire seeks "that someone" to, out on the terrace be

    Her tresses dark, strewn across her face seductively

    چاہے ہے پھر کسی کو مقابل میں آرزو

    سرمے سے تیز دشنۂ مژگاں کیے ہوئے

    Wishes want "that someone" to, be face to face with me

    The daggers of her lashes honed, by kohl's ebony

    اک نو بہار ناز کو تاکے ہے پھر نگاہ

    چہرہ فروغ مے سے گلستاں کیے ہوئے

    For a youthful beauty 'gain thirst these eyes of mine

    Her face being all ablossom then with the glow of wine

    پھر جی میں ہے کہ در پہ کسی کے پڑے رہیں

    سر زیر بار منت درباں کیے ہوئے

    I feel like standing once again at somebody's gate

    Pleading with her sentinel with my head oblate

    جی ڈھونڈتا ہے پھر وہی فرصت کہ رات دن

    بیٹھے رہیں تصور جاناں کیے ہوئے

    Again this heart seeks those days of leisure as of yore

    Sitting just enmeshed in thoughts of my paramour

    غالبؔ ہمیں نہ چھیڑ کہ پھر جوش اشک سے

    بیٹھے ہیں ہم تہیۂ طوفاں کیے ہوئے

    Trouble, tease me not for I, with the ardour of my tears

    Await determined to unleash a storm beyond all fears

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    انیتا سنگھوی

    انیتا سنگھوی

    اقبال بانو

    اقبال بانو

    نور جہاں

    نور جہاں

    بھوپندر سنگھ

    بھوپندر سنگھ

    محمد رفیع

    محمد رفیع

    RECITATIONS

    شمس الرحمن فاروقی

    شمس الرحمن فاروقی

    اقبال بانو

    اقبال بانو

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    شمس الرحمن فاروقی

    مدت ہوئی ہے یار کو مہماں کیے ہوئے شمس الرحمن فاروقی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY