مغنیوں کو بلاؤ کہ نیند آ جائے

محشر عنایتی

مغنیوں کو بلاؤ کہ نیند آ جائے

محشر عنایتی

MORE BY محشر عنایتی

    مغنیوں کو بلاؤ کہ نیند آ جائے

    کہو وہ گیت سناؤ کہ نیند آ جائے

    چلے بھی آؤ مرے جیتے جی اب اتنا بھی

    نہ انتظار بڑھاؤ کہ نیند آ جائے

    چراغ عمر گذشتہ بجھا دیا کس نے

    وہی چراغ جلاؤ کہ نیند آ جائے

    حقیقتوں نے تو کھل کھل کے نیند اڑا دی ہے

    نئے طلسم بناؤ کہ نیند آ جائے

    سکوں نصیبو ادھر آؤ اور کوئی تدبیر

    ذرا ہمیں بھی بتاؤ کہ نیند آ جائے

    بڑی طویل ہے محشرؔ کسی کے ہجر کی بات

    کوئی غزل ہی سناؤ کہ نیند آ جائے

    مآخذ:

    • Book : Sahbaa-o-Saman (Pg. 60)
    • اشاعت : 1st 1979 IInd 2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY