aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

مجھ سا بھی کوئی عشق میں ہے بد گماں نہیں

مفتی صدرالدین آزردہ

مجھ سا بھی کوئی عشق میں ہے بد گماں نہیں

مفتی صدرالدین آزردہ

MORE BYمفتی صدرالدین آزردہ

    مجھ سا بھی کوئی عشق میں ہے بد گماں نہیں

    کیا رشک دیکھ کر مجھے رنگ خزاں نہیں

    آنکھوں سے دیکھ کر تجھے سب ماننا پڑا

    کہتے تھے جو ہمیشہ چنیں ہے چناں نہیں

    اٹھ کر سحر کو سجدۂ مستانہ کے سوا

    طاعت قبول خاطر پیر مغاں نہیں

    افسردہ دل ہو در در رحمت نہیں ہے بند

    کس دن کھلا ہوا در پیر مغاں نہیں

    اے جذب شوق رحم کہ مد نظر ہے یار

    جا سکتی واں تلک نگہ ناتواں نہیں

    شب اس کو حال دل نے جتایا کچھ اس طرح

    ہیں لب تو کیا نگہ بھی ہوئی ترجماں نہیں

    کٹتی کسی طرح سے نہیں یہ شب فراق

    شاید کہ گردش آج تجھے آسماں نہیں

    اچھا ہوئی نکل گئی آہ حزیں کے ساتھ

    اک قہر تھی بلا تھی قیامت تھی جاں نہیں

    جانے ہے دل فلک کا مری سخت جانیاں

    ان ناتوانیوں کو پہنچتی تواں نہیں

    کہتا ہوں اس سے کچھ میں نکلتا ہے منہ سے کچھ

    کہنے کو یوں تو ہے گی زباں اور زباں نہیں

    مہکا ہوا ہے بیت حزن دیکھنا کوئی

    آیا نسیم مصر کا ہو کارواں نہیں

    لب بند ہوں تو روزن سینہ کو کیا کروں

    تھمتا تو مجھ سے نالۂ آتش عناں نہیں

    کیا کچھ نہ کر دکھاؤں پر اک دن کے واسطے

    ملتا بھی ہم کو منصب ہفت آسماں نہیں

    وہ شاخ نخل خشک ہوں میں کنج باغ میں

    دیکھے ہے بھول کر بھی جسے باغباں نہیں

    بے وقت آئے دیر میں کیا شورشیں کریں

    ہم پیرو پیر میکدہ بھی نوجواں نہیں

    آزردہؔ نے پڑھی غزل اک مے کدہ میں کل

    وہ صاف تر کہ سینہ پیر مغاں نہیں

    مأخذ:

    Mufti Sadruddin Aazurda(Hayat, Shakhsiyat, Ilmi Aur Adabi Karname) (Pg. e-213 p-212)

    • مصنف: عبدالرحمٰن پرواز اصلاحی
      • اشاعت: 1977
      • ناشر: مکتبہ جامعہ لمیٹیڈ، نئی دہلی
      • سن اشاعت: 1977

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے