نہ چھیڑ نام و نسب اور نسل و رنگ کی بات

ظفر نسیمی

نہ چھیڑ نام و نسب اور نسل و رنگ کی بات

ظفر نسیمی

MORE BYظفر نسیمی

    نہ چھیڑ نام و نسب اور نسل و رنگ کی بات

    کہ چل نکلتی ہے اکثر یہیں سے جنگ کی بات

    تمہارے شہر میں کس کس کو آئنہ دکھلائیں

    ہزار طرح کے چہرے ہزار رنگ کی بات

    ہر ایک بات پہ طعنہ ہر ایک بات پہ طنز

    کبھی تو یار کیا کر کسی سے ڈھنگ کی بات

    میں اس کے وعدۂ فردا پہ کیا یقیں کرتا

    ہنسی میں ٹال گیا ایک شوخ و شنگ کی بات

    اٹھا ہے سنگ ملامت بہ نام شیشۂ دل

    قرار پائی ہے شیشے کے ساتھ سنگ کی بات

    عجیب حال ہے یاروں کی بے حسی کا ظفرؔ

    سکوت مرگ کا عالم رباب و چنگ کی بات

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے