نگاہ شوق سے کب تک مقابلہ کرتے

عرشی بھوپالی

نگاہ شوق سے کب تک مقابلہ کرتے

عرشی بھوپالی

MORE BYعرشی بھوپالی

    نگاہ شوق سے کب تک مقابلہ کرتے

    وہ التفات نہ کرتے تو اور کیا کرتے

    یہ رسم ترک محبت بھی ہم ادا کرتے

    تیرے بغیر مگر زندگی کو کیا کرتے

    غرور حسن کو مانوس التجا کرتے

    وہ ہم نہیں کہ جو خود داریاں فنا کرتے

    کسی کی یاد نے تڑپا دیا پھر آ کے ہمیں

    ہوئی تھی دیر نہ کچھ دل سے مشورا کرتے

    یہ پوچھو حسن کو الزام دینے والوں سے

    جو وہ ستم بھی نہ کرتا تو آپ کیا کرتے

    ستم شعار ازل سے ہے حسن کی فطرت

    جو میں وفا بھی نہ کرتا تو وہ جفا کرتے

    ہمیں تو اپنی تباہی کی داد بھی نہ ملی

    تری نوازش بیجا کا کیا گلا کرتے

    نگاہ ناز کی معصومیت ارے توبہ

    جو ہم فریب نہ کھاتے تو اور کیا کرتے

    نگاہ لطف کی تسکیں کا شکریہ لیکن

    متاع درد کو کس دل سے ہم جدا کرتے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY