پھر اس دنیا سے امید وفا ہے

نریش کمار شاد

پھر اس دنیا سے امید وفا ہے

نریش کمار شاد

MORE BYنریش کمار شاد

    پھر اس دنیا سے امید وفا ہے

    تجھے اے زندگی کیا ہو گیا ہے

    بڑی ظالم نہایت بے وفا ہے

    یہ دنیا پھر بھی کتنی خوشنما ہے

    کوئی دیکھے تو بزم زندگی میں

    اجالوں نے اندھیرا کر دیا ہے

    خدا سے لوگ بھی خائف کبھی تھے

    مگر لوگوں سے اب خائف خدا ہے

    مزے پوچھو کچھ اس سے زندگی کے

    حوادث میں جسے جینا پڑا ہے

    مرے پہلو میں دل ہے تو یقیناً

    ازل ہی سے مگر ٹوٹا ہوا ہے

    زبان و فن سے میں واقف نہیں ہوں

    مگر وجدان میرا رہنما ہے

    مرے نقاد میری شاعری تو

    مرے ٹوٹے ہوئے دل کی صدا ہے

    کہاں ہوں شادؔ میں تو شاد سا ہوں

    وہ شاد خوش نوا تو مر چکا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY