پھرے راہ سے وہ یہاں آتے آتے

داغؔ دہلوی

پھرے راہ سے وہ یہاں آتے آتے

داغؔ دہلوی

MORE BY داغؔ دہلوی

    پھرے راہ سے وہ یہاں آتے آتے

    اجل مر رہی تو کہاں آتے آتے

    نہ جانا کہ دنیا سے جاتا ہے کوئی

    بہت دیر کی مہرباں آتے آتے

    سنا ہے کہ آتا ہے سر نامہ بر کا

    کہاں رہ گیا ارمغاں آتے آتے

    یقیں ہے کہ ہو جائے آخر کو سچی

    مرے منہ میں تیری زباں آتے آتے

    سنانے کے قابل جو تھی بات ان کو

    وہی رہ گئی درمیاں آتے آتے

    مجھے یاد کرنے سے یہ مدعا تھا

    نکل جائے دم ہچکیاں آتے آتے

    ابھی سن ہی کیا ہے جو بیباکیاں ہوں

    انہیں آئیں گی شوخیاں آتے آتے

    کلیجا مرے منہ کو آئے گا اک دن

    یوں ہی لب پر آہ و فغاں آتے آتے

    چلے آتے ہیں دل میں ارمان لاکھوں

    مکاں بھر گیا میہماں آتے آتے

    نتیجہ نہ نکلا تھکے سب پیامی

    وہاں جاتے جاتے یہاں آتے آتے

    تمہارا ہی مشتاق دیدار ہوگا

    گیا جان سے اک جواں آتے آتے

    تری آنکھ پھرتے ہی کیسا پھرا ہے

    مری راہ پر آسماں آتے آتے

    پڑا ہے بڑا پیچ پھر دل لگی میں

    طبیعت رکی ہے جہاں آتے آتے

    مرے آشیاں کے تو تھے چار تنکے

    چمن اڑ گیا آندھیاں آتے آتے

    کسی نے کچھ ان کو ابھارا تو ہوتا

    نہ آتے نہ آتے یہاں آتے آتے

    قیامت بھی آتی تھی ہم راہ اس کے

    مگر رہ گئی ہم عناں آتے آتے

    بنا ہے ہمیشہ یہ دل باغ و صحرا

    بہار آتے آتے خزاں آتے آتے

    نہیں کھیل اے داغؔ یاروں سے کہہ دو

    کہ آتی ہے اردو زباں آتے آتے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    تاج ملتانی

    تاج ملتانی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    پھرے راہ سے وہ یہاں آتے آتے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY