قید تن سے روح ہے ناشاد کیا

امداد امام اثرؔ

قید تن سے روح ہے ناشاد کیا

امداد امام اثرؔ

MORE BY امداد امام اثرؔ

    قید تن سے روح ہے ناشاد کیا

    چند روزہ عمر کی میعاد کیا

    میری ایذا سے عدو ہو شاد کیا

    تجھ پہ تکیہ او ستم ایجاد کیا

    ان کی خاطر جائیں بزم غیر میں

    آرزوئے جنت شداد کیا

    پا رہا ہے دل مصیبت کے مزے

    آئے لب پر شکوۂ بیداد کیا

    دل میں جو آئے اسے کہہ ڈالیے

    آپ کی باتیں کریں گے یاد کیا

    دوستو آئے ہیں وہ دشمن کے ساتھ

    مجھ کو دیتے ہو مبارک باد کیا

    جب نہیں کچھ اعتبار زندگی

    اس جہاں کا شاد کیا ناشاد کیا

    کچھ اگر تاثیر رکھتی ہے تو کھینچ

    ورنہ اے دل حاصل فریاد کیا

    جب برنگ گل ہے پابند مکاں

    باندھتے ہیں سرو کو آزاد کیا

    ہے ترا پامال ہر نخل چمن

    تیرے آگے سرو کیا شمشاد کیا

    یار کی تصویر دل پر کھینچ لی

    کھینچتے ہم منت بہزاد کیا

    غیر دل سے ایک دم جاتا نہیں

    ہم تجھے آئیں ستم گر یاد کیا

    مجھ سے پہلے سن چکے ہیں غیر کی

    وہ مرے حق میں کریں ارشاد کیا

    سر ٹپکتے ہیں اسیران قفس

    ہے چمن کی اے صبا روداد کیا

    عاشقی ہے سر پہ لینا کوہ غم

    نازش سر بازیٔ فرہاد کیا

    عرض اپنی ہے جو ہے عرض عدو

    دیکھیے کرتے ہیں وہ ارشاد کیا

    سرکشی تجھ سے کرے کیا تاب ہے

    آدمی کی اے خدا بنیاد کیا

    بے حقیقت جان کر دل کو اثرؔ

    تو نے اے ناداں کیا برباد کیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY