رنگینی ہوس کا وفا نام رکھ دیا

گوپال متل

رنگینی ہوس کا وفا نام رکھ دیا

گوپال متل

MORE BYگوپال متل

    رنگینی ہوس کا وفا نام رکھ دیا

    خودداری وفا کا جفا نام رکھ دیا

    انسان کی جو بات سمجھ میں نہ آ سکی

    انساں نے اس کا حق کی رضا نام رکھ دیا

    خود غرضیوں کے سائے میں پاتی ہے پرورش

    الفت کو جس کا صدق و صفا نام رکھ دیا

    بے مہری حبیب کا مشکل تھا اعتراف

    یاروں نے اس کا ناز و ادا نام رکھ دیا

    فطرت میں آدمی کی ہے مبہم سا ایک خوف

    اس خوف کا کسی نے خدا نام رکھ دیا

    یہ روح کیا ہے جسم کا عکس لطیف ہے

    یہ اور بات ہے کہ جدا نام رکھ دیا

    مفلس کو اہل زر نے بھی کیا کیا دئیے فریب

    اپنی جفا کا حکم خدا نام رکھ دیا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    رنگینی ہوس کا وفا نام رکھ دیا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY