رموز مصلحت کو ذہن پر طاری نہیں کرتا

عاصی کرنالی

رموز مصلحت کو ذہن پر طاری نہیں کرتا

عاصی کرنالی

MORE BYعاصی کرنالی

    رموز مصلحت کو ذہن پر طاری نہیں کرتا

    ضمیر آدمیت سے میں غداری نہیں کرتا

    قلم شاخ صداقت ہے زباں برگ امانت ہے

    جو دل میں ہے وہ کہتا ہوں اداکاری نہیں کرتا

    میں آخر آدمی ہوں کوئی لغزش ہو ہی جاتی ہے

    مگر اک وصف ہے مجھ میں دل آزاری نہیں کرتا

    میں دامان نظر میں کس لیے سارا چمن بھر لوں

    مرا ذوق تماشا بار برداری نہیں کرتا

    مکافات عمل خود راستہ تجویز کرتی ہے

    خدا قوموں پہ اپنا فیصلہ جاری نہیں کرتا

    مرے بچے تجھے اتنا توکل راس آ جائے

    کہ سر پر امتحاں ہے اور تیاری نہیں کرتا

    میں آسیؔ حسن کی آئینہ داری خوب کرتا ہوں

    مگر میں حسن کی آئینہ برداری نہیں کرتا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    عاصی کرنالی

    عاصی کرنالی

    مآخذ:

    • کتاب : Ghazal Calendar-2015 (Pg. 07.09.2015)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY