سینے میں سلگتے ہوئے لمحات کا جنگل

اسلم کولسری

سینے میں سلگتے ہوئے لمحات کا جنگل

اسلم کولسری

MORE BYاسلم کولسری

    سینے میں سلگتے ہوئے لمحات کا جنگل

    کس طرح کٹے تاروں بھری رات کا جنگل

    ہاں دست شناسی پہ بڑا ناز تھا اس کو

    دیکھا نہ گیا اس سے مرے ہات کا جنگل

    امید کا اک پیڑ اگائے نہیں اگتا

    خود رو ہے مگر ذہن میں شبہات کا جنگل

    دے طاقت پرواز کہ اوپر سے گزر جاؤں

    کیوں راہ میں حائل ہے مری ذات کا جنگل

    خوابیدہ ہیں اس میں کئی عیار درندے

    بہتر ہے کہ جل جائے یہ جذبات کا جنگل

    کچھ اور مسائل مری جانب ہوئے مائل

    کچھ اور ہرا ہو گیا حالات کا جنگل

    تصویر غزل میں سے جھلکتا ہوا اسلمؔ

    یہ شہر سخن ہے کہ خرافات کا جنگل

    مأخذ :
    • کتاب : Range-e-Gazal (Pg. 127)

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY