سمجھ میں خاک یہ جادوگری نہیں آتی

شان الحق حقی

سمجھ میں خاک یہ جادوگری نہیں آتی

شان الحق حقی

MORE BYشان الحق حقی

    سمجھ میں خاک یہ جادوگری نہیں آتی

    چراغ جلتے ہیں اور روشنی نہیں آتی

    کسی کے ناز پہ افسردہ خاطری دل کی

    ہنسی کی بات ہے پھر بھی ہنسی نہیں آتی

    نہ پوچھ ہیئت طرف و چمن کہ ایسی بھی

    بہار باغ میں بہکی ہوئی نہیں آتی

    ہجوم عیش تو ان تیرہ بستیوں میں کہاں

    کہیں سے آہ کی آواز بھی نہیں آتی

    جدائیوں سے شکایت تو ہو بھی جاتی ہے

    رفاقتوں سے وفا میں کمی نہیں آتی

    کچھ ایسا محو ہے اسباب رنج و عیش میں دل

    کہ عیش و رنج کی پہچان ہی نہیں آتی

    سزا یہ ہے کہ رہیں چشم لطف سے محروم

    خطا یہ ہے کہ ہوس پیشگی نہیں آتی

    خدا رکھے تری محفل کی رونقیں آباد

    نظارگی سے نظر میں کمی نہیں آتی

    بڑی تلاش سے ملتی ہے زندگی اے دوست

    قضا کی طرح پتا پوچھتی نہیں آتی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    سمجھ میں خاک یہ جادوگری نہیں آتی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY