شکست رنگ تمنا کو عرض حال کہوں

روش صدیقی

شکست رنگ تمنا کو عرض حال کہوں

روش صدیقی

MORE BYروش صدیقی

    شکست رنگ تمنا کو عرض حال کہوں

    سکوت لب کو تقاضائے صد سوال کہوں

    ہزار رخ ترے ملنے کے ہیں نہ ملنے میں

    کسے فراق کہوں اور کسے وصال کہوں

    مجھے یقیں ہے کہ کچھ بھی چھپا نہیں ان سے

    انہیں یہ ضد کہ دل مبتلا کا حال کہوں

    تو بے مثال سہی پھر بھی دل کو ہے اصرار

    ادا ادا کو تری عالم مثال کہوں

    مزاج محفل گیتی اگر نہ برہم ہو

    تو رنگ عیش کو گرد رخ ملال کہوں

    ہوا کے دوش پہ ہے ایک شعلۂ لرزاں

    کہوں تو کیا تری تہذیب کا مآل کہوں

    وہ ایک خواب جو تعمیر آپ ہے اپنی

    میں کیا حقیقت رعنائی خیال کہوں

    غزل کی بات رہے گی وہیں اگر سو بار

    جواب شوخی و رعنائی غزال کہوں

    روشؔ یہ سادگی عشق کا تقاضا ہے

    کمال ہوش کو اخلاص کا زوال کہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY