شکوے کے نام سے بے مہر خفا ہوتا ہے

مرزا غالب

شکوے کے نام سے بے مہر خفا ہوتا ہے

مرزا غالب

MORE BY مرزا غالب

    شکوے کے نام سے بے مہر خفا ہوتا ہے

    یہ بھی مت کہہ کہ جو کہیے تو گلہ ہوتا ہے

    unkind, at mere mention of complaint she is annoyed

    do not even utter this as grievance is implied

    پر ہوں میں شکوے سے یوں راگ سے جیسے باجا

    اک ذرا چھیڑئیے پھر دیکھیے کیا ہوتا ہے

    I am so full of complaint, as instruments with air

    you have to but lightly blow, and then see what is there

    گو سمجھتا نہیں پر حسن تلافی دیکھو

    شکوۂ جور سے سرگرم جفا ہوتا ہے

    although she is naïve yet see, how well she makes amends

    at complaints of tyranny, more cruelty attends

    عشق کی راہ میں ہے چرخ مکوکب کی وہ چال

    سست رو جیسے کوئی آبلہ پا ہوتا ہے

    in love's path the star filled sky's footsteps are so effete

    as of one who slowly moves with blisters on his feet

    کیوں نہ ٹھہریں ہدف ناوک بیداد کہ ہم

    آپ اٹھا لاتے ہیں گر تیر خطا ہوتا ہے

    target of cruelty's missiles why should I not be

    Myself I gather and return arrows that miss me

    خوب تھا پہلے سے ہوتے جو ہم اپنے بد خواہ

    کہ بھلا چاہتے ہیں اور برا ہوتا ہے

    had I wished ill on myself would be of greater use

    Coz when now I hope for good, calamity accrues

    نالہ جاتا تھا پرے عرش سے میرا اور اب

    لب تک آتا ہے جو ایسا ہی رسا ہوتا ہے

    my plaints went past the heavens once but it is, they now

    barely reach up to my lips, if successful somehow

    خامہ میرا کہ وہ ہے باربد بزم سخن

    شاہ کی مدح میں یوں نغمہ سرا ہوتا ہے

    my quill is the bard Baarbud in gatherings of rhyme

    just like him breaks into song praising the king sublime

    اے شہنشاہ کواکب سپہ و مہر علم

    تیرے اکرام کا حق کس سے ادا ہوتا ہے

    Mighty King with stars for troops, whose standard is the Sun

    he who can repay your kindness, is there anyone?

    سات اقلیم کا حاصل جو فراہم کیجے

    تو وہ لشکر کا ترے نعل بہا ہوتا ہے

    wealth of seven continents even if were to be

    would merely meet the ransom set by your cavalry

    ہر مہینے میں جو یہ بدر سے ہوتا ہے ہلال

    آستاں پر ترے مہ ناصیہ سا ہوتا ہے

    every month from full moon to a crescent it

    tis because upon your doorstep supplicates it's brow

    میں جو گستاخ ہوں آئین غزل خوانی میں

    یہ بھی تیرا ہی کرم ذوق فزا ہوتا ہے

    my audacity of style in Gazal-rendering

    your kindness is the cause for this zest O mighty king

    رکھیو غالبؔ مجھے اس تلخ نوائی میں معاف

    آج کچھ درد مرے دل میں سوا ہوتا ہے

    pardon me for bitterness that now my songs possess

    the poignancy of pain in my heart is in excess

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY