سن تو سہی جہاں میں ہے تیرا فسانہ کیا

حیدر علی آتش

سن تو سہی جہاں میں ہے تیرا فسانہ کیا

حیدر علی آتش

MORE BYحیدر علی آتش

    سن تو سہی جہاں میں ہے تیرا فسانہ کیا

    کہتی ہے تجھ کو خلق خدا غائبانہ کیا

    کیا کیا الجھتا ہے تری زلفوں کے تار سے

    بخیہ طلب ہے سینۂ صد چاک شانہ کیا

    زیر زمیں سے آتا ہے جو گل سو زر بکف

    قاروں نے راستے میں لٹایا خزانہ کیا

    اڑتا ہے شوق راحت منزل سے اسپ عمر

    مہمیز کہتے ہیں گے کسے تازیانہ کیا

    زینہ صبا کا ڈھونڈتی ہے اپنی مشت خاک

    بام بلند یار کا ہے آستانہ کیا

    چاروں طرف سے صورت جاناں ہو جلوہ گر

    دل صاف ہو ترا تو ہے آئینہ خانہ کیا

    صیاد اسیر دام رگ گل ہے عندلیب

    دکھلا رہا ہے چھپ کے اسے دام و دانہ کیا

    طبل و علم ہی پاس ہے اپنے نہ ملک و مال

    ہم سے خلاف ہو کے کرے گا زمانہ کیا

    آتی ہے کس طرح سے مرے قبض روح کو

    دیکھوں تو موت ڈھونڈ رہی ہے بہانہ کیا

    ہوتا ہے زرد سن کے جو نامرد مدعی

    رستم کی داستاں ہے ہمارا فسانہ کیا

    ترچھی نگہ سے طائر دل ہو چکا شکار

    جب تیر کج پڑے تو اڑے گا نشانہ کیا

    صیاد گل عذار دکھاتا ہے سیر باغ

    بلبل قفس میں یاد کرے آشیانہ کیا

    بیتاب ہے کمال ہمارا دل حزیں

    مہماں سرائے جسم کا ہوگا روانہ کیا

    یوں مدعی حسد سے نہ دے داد تو نہ دے

    آتشؔ غزل یہ تو نے کہی عاشقانہ کیا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    مہدی حسن

    مہدی حسن

    بیگم اختر

    بیگم اختر

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    سن تو سہی جہاں میں ہے تیرا فسانہ کیا فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY