تھکن تو اگلے سفر کے لیے بہانہ تھا

افتخار عارف

تھکن تو اگلے سفر کے لیے بہانہ تھا

افتخار عارف

MORE BY افتخار عارف

    تھکن تو اگلے سفر کے لیے بہانہ تھا

    اسے تو یوں بھی کسی اور سمت جانا تھا

    وہی چراغ بجھا جس کی لو قیامت تھی

    اسی پہ ضرب پڑی جو شجر پرانا تھا

    متاع جاں کا بدل ایک پل کی سرشاری

    سلوک خواب کا آنکھوں سے تاجرانہ تھا

    ہوا کی کاٹ شگوفوں نے جذب کر لی تھی

    تبھی تو لہجۂ خوشبو بھی جارحانہ تھا

    وہی فراق کی باتیں وہی حکایت وصل

    نئی کتاب کا ایک اک ورق پرانا تھا

    قبائے زرد نگار خزاں پہ سجتی تھی

    تبھی تو چال کا انداز خسروانہ تھا

    RECITATIONS

    افتخار عارف

    افتخار عارف

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    افتخار عارف

    تھکن تو اگلے سفر کے لیے بہانہ تھا افتخار عارف

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY