ٹھوکریں کھا کے سنبھلنا نہیں آتا ہے مجھے

فرحت احساس

ٹھوکریں کھا کے سنبھلنا نہیں آتا ہے مجھے

فرحت احساس

MORE BYفرحت احساس

    ٹھوکریں کھا کے سنبھلنا نہیں آتا ہے مجھے

    چل مرے ساتھ کہ چلنا نہیں آتا ہے مجھے

    اپنی آنکھوں سے بہا دے کوئی میرے آنسو

    اپنی آنکھوں سے نکلنا نہیں آتا ہے مجھے

    اب تری گرمئی آغوش ہی تدبیر کرے

    موم ہو کر بھی پگھلنا نہیں آتا ہے مجھے

    شام کر دیتا ہے اکثر کوئی زلفوں والا

    ورنہ وہ دن ہوں کہ ڈھلنا نہیں آتا ہے مجھے

    کتنے دل توڑ چکا ہوں اسی بے ہنری سے

    جال میں پھنس کے نکلنا نہیں آتا ہے مجھے

    بیچ دریا کے میں دریا تو بدل سکتا ہوں

    اپنی کشتی کو بدلنا نہیں آتا ہے مجھے

    اپنے معنی کو بدلنا تو مجھے آتا ہے

    ان کے لفظوں کو بدلنا نہیں آتا ہے مجھے

    فرحتؔ احساس ترقی نہیں کرنی مجھ کو

    اتنی رفتار سے چلنا نہیں آتا ہے مجھے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY