تیر پر تیر لگے تو بھی نہ پیکاں نکلے

میر حسن

تیر پر تیر لگے تو بھی نہ پیکاں نکلے

میر حسن

MORE BYمیر حسن

    تیر پر تیر لگے تو بھی نہ پیکاں نکلے

    یا رب اس گھر میں جو آوے نہ وہ مہماں نکلے

    نیک و بد میں جو نہیں جنگ عدم میں تو بھلا

    کیوں گل و خار بہم دست و گریباں نکلے

    دست چالاک جنوں سینہ کو بھی کر دے چاک

    تا کہیں پہلو سے میرے دل نالاں نکلے

    کون سی رات وہ ہووے کہ جو آوے شب وصل

    کون سا روز وہ ہو جو شب ہجراں نکلے

    گلشن دل میں بھی تھی اپنی کچھ الٹی تاثیر

    تخم امید جو بوئے گل حرماں نکلے

    کر نظر رخ کو ترے کفر سے نکلے کافر

    زلف کو دیکھ تری دیں سے مسلماں نکلے

    جتنا کہتے ہیں نکلتا ہے حسنؔ گھر سے ترے

    غصے ہو ہو یہی کہتا ہے ابھی ہاں نکلے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے