ترے فراق میں جو آنکھ سے رواں ہوا ہے

خورشید ربانی

ترے فراق میں جو آنکھ سے رواں ہوا ہے

خورشید ربانی

MORE BYخورشید ربانی

    ترے فراق میں جو آنکھ سے رواں ہوا ہے

    وہ اشک خوں ہی مرے غم کا ترجماں ہوا ہے

    ہے جانے کیا پس دیوار آئینہ جس پر

    یقین کر کے بھی دل وقف صد گماں ہوا ہے

    بریدہ شاخ شجر کا شکستہ پتوں کا

    ترے سوا بھی کوئی موجۂ خزاں ہوا ہے

    ذرا سی دیر کو اس نے پلٹ کے دیکھا تھا

    ذرا سی بات کا چرچا کہاں کہاں ہوا ہے

    بچھڑ کے تجھ سے تھا خورشیدؔ کا ٹھکانہ کیا

    خوشا نصیب شب غم کا آستاں ہوا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY