تم جانو تم کو غیر سے جو رسم و راہ ہو

مرزا غالب

تم جانو تم کو غیر سے جو رسم و راہ ہو

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    تم جانو تم کو غیر سے جو رسم و راہ ہو

    مجھ کو بھی پوچھتے رہو تو کیا گناہ ہو

    بچتے نہیں مواخذۂ روز حشر سے

    قاتل اگر رقیب ہے تو تم گواہ ہو

    کیا وہ بھی بے گنہ کش و حق ناشناس ہیں

    مانا کہ تم بشر نہیں خورشید و ماہ ہو

    ابھرا ہوا نقاب میں ہے ان کے ایک تار

    مرتا ہوں میں کہ یہ نہ کسی کی نگاہ ہو

    جب مے کدہ چھٹا تو پھر اب کیا جگہ کی قید

    مسجد ہو مدرسہ ہو کوئی خانقاہ ہو

    سنتے ہیں جو بہشت کی تعریف سب درست

    لیکن خدا کرے وہ ترا جلوہ گاہ ہو

    غالبؔ بھی گر نہ ہو تو کچھ ایسا ضرر نہیں

    دنیا ہو یا رب اور مرا بادشاہ ہو

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    منا ڈے

    منا ڈے

    مآخذ :
    • کتاب : Deewan-e-Ghalib Jadeed (Al-Maroof Ba Nuskha-e-Hameedia) (Pg. 297)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY