ادھر مذہب ادھر انساں کی فطرت کا تقاضا ہے

جوشؔ ملیح آبادی

ادھر مذہب ادھر انساں کی فطرت کا تقاضا ہے

جوشؔ ملیح آبادی

MORE BY جوشؔ ملیح آبادی

    ادھر مذہب ادھر انساں کی فطرت کا تقاضا ہے

    وہ دامان مہ کنعاں ہے یہ دست زلیخا ہے

    ادھر تیری مشیت ہے ادھر حکمت رسولوں کی

    الٰہی آدمی کے باب میں کیا حکم ہوتا ہے

    یہ مانا دونوں ہی دھوکے ہیں رندی ہو کہ درویشی

    مگر یہ دیکھنا ہے کون سا رنگین دھوکا ہے

    کھلونا تو نہایت شوخ و رنگیں ہے تمدن کا

    معرف میں بھی ہوں لیکن کھلونا پھر کھلونا ہے

    مرے آگے تو اب کچھ دن سے ہر آنسو محبت کا

    کنار آب رکناباد و گلگشت مصلےٰ ہے

    مجھے معلوم ہے جو کچھ تمنا ہے رسولوں کی

    مگر کیا درحقیقت وہ خدا کی بھی تمنا ہے

    مشیت کھیلنا زیبا نہیں میری بصیرت سے

    اٹھا لے ان کھلونوں کو یہ دنیا ہے وہ عقبیٰ ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY