ان کی بے رخی میں بھی التفات شامل ہے

امیر قزلباش

ان کی بے رخی میں بھی التفات شامل ہے

امیر قزلباش

MORE BYامیر قزلباش

    ان کی بے رخی میں بھی التفات شامل ہے

    آج کل مری حالت دیکھنے کے قابل ہے

    Even her indifference some kindness does contain

    My condition needs to be seen for I cannot explain

    قتل ہو تو میرا سا موت ہو تو میری سی

    میرے سوگواروں میں آج میرا قاتل ہے

    Today amongst my mourners, my murderer too grieves

    A death, a murder as was mine, all lovers should attain

    ہر قدم پہ ناکامی ہر قدم پہ محرومی

    غالباً کوئی دشمن دوستوں میں شامل ہے

    It was as if amidst my friends there was an enemy

    A failure and deprived at every step did I remain

    مضطرب ہیں موجیں کیوں اٹھ رہے ہیں طوفاں کیوں

    کیا کسی سفینے کو آرزوئے ساحل ہے

    Why are the waves so agitated, why do storms unfold?

    Does a ship amidst the seas, seek the shores again?

    صرف راہزن ہی سے کیوں امیرؔ شکوہ ہو

    منزلوں کی راہوں میں راہبر بھی حائل ہے

    When guides too are present in the journey's course

    Then only of highwaymen why should one complain?

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ان کی بے رخی میں بھی التفات شامل ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY