وقت پیری شباب کی باتیں

شیخ ابراہیم ذوقؔ

وقت پیری شباب کی باتیں

شیخ ابراہیم ذوقؔ

MORE BYشیخ ابراہیم ذوقؔ

    وقت پیری شباب کی باتیں

    ایسی ہیں جیسے خواب کی باتیں

    in old age talk of youth now seems

    to be just like the stuff of dreams

    پھر مجھے لے چلا ادھر دیکھو

    دل خانہ خراب کی باتیں

    Lo! there again it takes me see!

    my ruined heart's advice to me

    واعظا چھوڑ ذکر نعمت خلد

    کہہ شراب و کباب کی باتیں

    on heaven's virtues don't opine

    O preacher talk of food and wine

    مہ جبیں یاد ہیں کہ بھول گئے

    وہ شب ماہتاب کی باتیں

    do you recall O moon faced one

    on moonlit nights what we had done

    حرف آیا جو آبرو پہ مری

    ہیں یہ چشم پرآب کی باتیں

    if, blemish on my honor, came

    my teary eyes are then to blame

    سنتے ہیں اس کو چھیڑ چھیڑ کے ہم

    کس مزے سے عتاب کی باتیں

    I tease her for I love to hear

    her anger's music to my ear

    جام مے منہ سے تو لگا اپنے

    چھوڑ شرم و حجاب کی باتیں

    do let your lips in wine immerse

    let shame and modesty,disperse

    مجھ کو رسوا کریں گی خوب اے دل

    یہ تری اضطراب کی باتیں

    disgraced, O heart you now shall be

    because of your anxiety

    جاؤ ہوتا ہے اور بھی خفقاں

    سن کے ناصح جناب کی باتیں

    go, angrier now let him be

    when the preacher talks to me

    قصۂ زلف یار دل کے لیے

    ہیں عجب پیچ و تاب کی باتیں

    -------

    -------

    ذکر کیا جوش عشق میں اے ذوقؔ

    ہم سے ہوں صبر و تاب کی باتیں

    in love's ardour, zauq, how, pray

    can I speak of restraint today?

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY