وہ رتجگاتھا کہ افسون خواب طاری تھا

اختر ہوشیارپوری

وہ رتجگاتھا کہ افسون خواب طاری تھا

اختر ہوشیارپوری

MORE BYاختر ہوشیارپوری

    وہ رتجگاتھا کہ افسون خواب طاری تھا

    دیئے کی لو پہ ستاروں کا رقص جاری تھا

    میں اس کو دیکھتا تھا دم بخود تھا حیراں تھا

    کسے خبر وہ کڑا وقت کتنا بھاری تھا

    گزرتے وقت نے کیا کیا نہ چارہ سازی کی

    وگرنہ زخم جو اس نے دیا تھا کاری تھا

    دیار جاں میں بڑی دیر میں یہ بات کھلی

    مرا وجود ہی خود ننگ دوست داری تھا

    کسے بتاؤں میں اپنی نوا کی رمز اخترؔ

    کہ حرف جو نہیں اترے میں ان کا قاری تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY