زندگی بھر ایک ہی کار ہنر کرتے رہے

عنبرین حسیب عنبر

زندگی بھر ایک ہی کار ہنر کرتے رہے

عنبرین حسیب عنبر

MORE BYعنبرین حسیب عنبر

    زندگی بھر ایک ہی کار ہنر کرتے رہے

    اک گھروندا ریت کا تھا جس کو گھر کرتے رہے

    ہم کو بھی معلوم تھا انجام کیا ہوگا مگر

    شہر کوفہ کی طرف ہم بھی سفر کرتے رہے

    اڑ گئے سارے پرندے موسموں کی چاہ میں

    انتظار ان کا مگر بوڑھے شجر کرتے رہے

    یوں تو ہم بھی کون سا زندہ رہے اس شہر میں

    زندہ ہونے کی اداکاری مگر کرتے رہے

    آنکھ رہ تکتی رہی دل اس کو سمجھاتا رہا

    اپنا اپنا کام دونوں عمر بھر کرتے رہے

    اک نہیں کا خوف تھا سو ہم نے پوچھا ہی نہیں

    یاد کیا ہم کو بھی وہ دیوار و در کرتے رہے

    مأخذ :
    • کتاب : Dil Kay Ufuq Par (Pg. 127)
    • Author : Ambareen Haseeb Amber
    • مطبع : Kitab Market ,Office 17 Urdu Bazar, Karachi, Pakistan (2012)
    • اشاعت : 2012

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY