ہمارے ساتھ کی سب لڑکیاں اب نانیاں ہوں گی

خالد عرفان

ہمارے ساتھ کی سب لڑکیاں اب نانیاں ہوں گی

خالد عرفان

MORE BYخالد عرفان

    ہمارے ساتھ کی سب لڑکیاں اب نانیاں ہوں گی

    کبھی بسکٹ تھیں لیکن اب وہ باقر خانیاں ہوں گی

    ہمارے رہنماؤں نے کچھ ایسے بیج بوئے ہیں

    جہاں تربوز اگتے تھے وہاں خوبانیاں ہوں گی

    تمہیں سوچو کہ پھر باراتیوں کا حال کیا ہوگا

    اگر شادی میں جیکسن ہائٹس کی بریانیاں ہوں گی

    الیکشن پھر وہ ذی الحج کے مہینے میں کرائیں گے

    تو کیا دو دانت کے ووٹر کی پھر قربانیاں ہوں گی

    عجب انداز سے جنت میں وہ حوروں پہ جھپٹیں گے

    مگر ملاؤں کو پکڑے ہوئے ملانیاں ہوں گی

    مرے دامن میں خوش دامن نے اک ہیرا جو ڈالا ہے

    یہ دولت ہے تو پھر کیا بے سر و سامانی ہوں گی

    جو ایس ایم ایس پہ ہر لڑکے کو درس عشق دیتی ہیں

    وہ ساری لڑکیاں کالج میں کل استانیاں ہوں گی

    یہاں تم سجدۂ تعظیم انساں کو بجا لاؤ

    وہاں زنجیر میں جکڑی ہوئی پیشانیاں ہوں گی

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے