نظم جہاں کو زیر و زبر دیکھتا ہوں میں

ماچس لکھنوی

نظم جہاں کو زیر و زبر دیکھتا ہوں میں

ماچس لکھنوی

MORE BYماچس لکھنوی

    نظم جہاں کو زیر و زبر دیکھتا ہوں میں

    مادہ کے اختیار میں نر دیکھتا ہوں میں

    آنکھوں پہ بن رہی ہے اگر دیکھتا ہوں میں

    یہ جانتا ہوں ان کو مگر دیکھتا ہوں میں

    میں دیکھتا نہیں ہوں اگر دیکھتے ہیں وہ

    وہ دیکھتے نہیں ہیں اگر دیکھتا ہوں میں

    واعظ نے مجھ میں دیکھی ہے ایمان کی کمی

    واعظ میں صرف دم کی کسر دیکھتا ہوں میں

    اب یہ ہوئی ہے جلوہ نمائی کی انتہا

    وہ سامنے ڈٹے ہیں جدھر دیکھتا ہوں میں

    اللہ رے رعب و داب جنوں بھاگتا ہے وہ

    جس کی طرف اٹھا کے نظر دیکھتا ہوں میں

    کہتی ہے ہر گرہ کہ رہائی محال ہے

    جب چونچ سے ٹٹول کے پر دیکھتا ہوں میں

    جس وقت مل کے پڑھتے ہیں دونوں کتاب عشق

    وہ زیر دیکھتے ہیں زبر دیکھتا ہوں میں

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے