آزادیٔ وطن

مخدومؔ محی الدین

آزادیٔ وطن

مخدومؔ محی الدین

MORE BY مخدومؔ محی الدین

    کہو ہندوستاں کی جے

    کہو ہندوستاں کی جے

    قسم ہے خون سے سینچے ہوئے رنگیں گلستاں کی

    قسم ہے خون دہقاں کی قسم خون شہیداں کی

    یہ ممکن ہے کہ دنیا کے سمندر خشک ہو جائیں

    یہ ممکن ہے کہ دریا بہتے بہتے تھک کے سو جائیں

    جلانا چھوڑ دیں دوزخ کے انگارے یہ ممکن ہے

    روانی ترک کر دیں برق کے دھارے یہ ممکن ہے

    زمین پاک اب ناپاکیوں کو ڈھو نہیں سکتی

    وطن کی شمع آزادی کبھی گل ہو نہیں سکتی

    کہو ہندوستاں کی جے

    کہو ہندوستاں کی جے

    وہ ہندی نوجواں یعنی علمبردار آزادی

    وطن کی پاسباں وہ تیغ جوہر دار آزادی

    وہ پاکیزہ شرارہ بجلیوں نے جس کو دھویا ہے

    وہ انگارہ کہ جس میں زیست نے خود کو سمویا ہے

    وہ شمع زندگانی آندھیوں نے جس کو پالا ہے

    اک ایسی ناؤ طوفانوں نے خود جس کو سنبھالا ہے

    وہ ٹھوکر جس سے گیتی لرزہ بر اندام رہتی ہے

    وہ دھارا جس کے سینے پر عمل کی ناؤ بہتی ہے

    چھپی خاموش آہیں شور محشر بن کے نکلی ہیں

    دبی چنگاریاں خورشید خاور بن کے نکلی ہیں

    بدل دی نوجوان ہند نے تقدیر زنداں کی

    مجاہد کی نظر سے کٹ گئی زنجیر زنداں کی

    کہو ہندوستاں کی جے

    کہو ہندوستاں کی جے

    کہو ہندوستاں کی جے......

    مآخذ:

    • کتاب : Azadi Ki Nazmein (Pg. 98)
    • Author : Sibte Hasan
    • مطبع : Qaumi Council Baraye-farogh Urdu (1985(Urdu Acadami U.P,2007 (Urdu Council Adition))
    • اشاعت : 1985(Urdu Acadami U.P,2007 (Urdu Council Adition)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY