aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

بلیک آؤٹ

فیض احمد فیض

بلیک آؤٹ

فیض احمد فیض

MORE BYفیض احمد فیض

    دلچسپ معلومات

    Faiz wrote this on "Indo-Pak" war.

    جب سے بے نور ہوئی ہیں شمعیں

    خاک میں ڈھونڈھتا پھرتا ہوں نہ جانے کس جا

    کھو گئی ہیں مری دونوں آنکھیں

    تم جو واقف ہو بتاؤ کوئی پہچان مری

    اس طرح ہے کہ ہر اک رگ میں اتر آیا ہے

    موج در موج کسی زہر کا قاتل دریا

    تیرا ارمان، تری یاد لیے جان مری

    جانے کس موج میں غلطاں ہے کہاں دل میرا

    ایک پل ٹھہرو کہ اس پار کسی دنیا سے

    برق آئے مری جانب ید بیضا لے کر

    اور مری آنکھوں کے گم گشتہ گہر

    جام ظلمت سے سیہ مست

    نئی آنکھوں کے شب تاب گہر

    لوٹا دے

    ایک پل ٹھہرو کہ دریا کا کہیں پاٹ لگے

    اور نیا دل میرا

    زہر میں دھل کے، فنا ہو کے

    کسی گھاٹ لگے

    پھر پئے نذر نئے دیدہ و دل لے کے چلوں

    حسن کی مدح کروں شوق کا مضمون لکھوں

    مأخذ:

    Nuskha Hai Wafa (Pg. 409)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے