احسن یوسف زئی

غزل 9

اشعار 7

برسات تھم چکی ہے مگر ہر شجر کے پاس

اتنا تو ہے کہ آپ کا دامن بھگو سکے

نیند کو لوگ موت کہتے ہیں

خواب کا نام زندگی بھی ہے

کاغذ کی ناؤ ہوں جسے تنکا ڈبو سکے

یوں بھی نہیں کہ آپ سے یہ بھی نہ ہو سکے

ہماری سانسیں ملی ہیں گن کے

نہ جانے کتنے بجے ہیں دن کے

سب کے آنگن جھانکنے والے ہم سے ہی کیوں بیر تجھے

کب تک تیرا رستہ دیکھیں ساری رات کے جاگے ہم

کتاب 1

تہہ دریا

 

1980