Anwar Shuoor's Photo'

انور شعور

1943 | کراچی, پاکستان

پاکستان کے ممتاز ترین شاعروں میں سے ایک، ایک اخبار میں روزانہ حالات حاضرہ پر ایک قطعہ لکھتے ہیں

پاکستان کے ممتاز ترین شاعروں میں سے ایک، ایک اخبار میں روزانہ حالات حاضرہ پر ایک قطعہ لکھتے ہیں

غزل 58

اشعار 55

اچھا خاصا بیٹھے بیٹھے گم ہو جاتا ہوں

اب میں اکثر میں نہیں رہتا تم ہو جاتا ہوں

  • شیئر کیجیے

فرشتوں سے بھی اچھا میں برا ہونے سے پہلے تھا

وہ مجھ سے انتہائی خوش خفا ہونے سے پہلے تھا

اتفاق اپنی جگہ خوش قسمتی اپنی جگہ

خود بناتا ہے جہاں میں آدمی اپنی جگہ

مزاحیہ 3

 

کتاب 2

کلیات انور شعور

 

2015

 

تصویری شاعری 11

محبت رہی چار دن زندگی میں رہا چار دن کا اثر زندگی بھر

یہ مت پوچھو کہ کیسا آدمی ہوں کرو_گے یاد، ایسا آدمی ہوں مرا نام_و_نسب کیا پوچھتے ہو! ذلیل_و_خوار_و_رسوا آدمی ہوں تعارف اور کیا اس کے سوا ہو کہ میں بھی آپ جیسا آدمی ہوں زمانے کے جھمیلوں سے مجھے کیا مری جاں! میں تمہارا آدمی ہوں چلے آیا کرو میری طرف بھی! محبت کرنے والا آدمی ہوں توجہ میں کمی بیشی نہ جانو عزیزو! میں اکیلا آدمی ہوں گزاروں ایک جیسا وقت کب تک کوئی پتھر ہوں میں یا آدمی ہوں شعورؔ آ جاؤ میرے ساتھ، لیکن! میں اک بھٹکا ہوا سا آدمی ہوں

اچھا خاصا بیٹھے بیٹھے گم ہو جاتا ہوں اب میں اکثر میں نہیں رہتا تم ہو جاتا ہوں

اچھا خاصا بیٹھے بیٹھے گم ہو جاتا ہوں اب میں اکثر میں نہیں رہتا تم ہو جاتا ہوں

ویڈیو 28

This video is playing from YouTube

ویڈیو کا زمرہ
کلام شاعر بہ زبان شاعر

انور شعور

انور شعور

انور شعور

انور شعور

Ab dikhai nahi deta kahi jata hua dil

Anwar Shuoor pakistani poet who writes a four-lined on current affairs daily for the Pakistani Newspaper Jung. Anwar Shuoor is reciting his ghazals for Rekhta.org. انور شعور

Be zabani meri zaban nahi_

Anwar Shuoor pakistani poet who writes a four-lined on current affairs daily for the Pakistani Newspaper Jung. Anwar Shuoor is reciting his ghazals for Rekhta.org. انور شعور

Be zarurat hume sote se uthaya kyu hain

Anwar Shuoor pakistani poet who writes a four-lined on current affairs daily for the Pakistani Newspaper Jung. Anwar Shuoor is reciting his ghazals for Rekhta.org. انور شعور

Bitha ke apne qareeb uthaya kabhi kisi ne kabhi kisi ne

Anwar Shuoor pakistani poet who writes a four-lined on current affairs daily for the Pakistani Newspaper Jung. Anwar Shuoor is reciting his ghazals for Rekhta.org. انور شعور

Dekh to ghar se nikal kar ke gali me kya hai_

Anwar Shuoor pakistani poet who writes a four-lined on current affairs daily for the Pakistani Newspaper Jung. Anwar Shuoor is reciting his ghazals for Rekhta.org. انور شعور

Hum waha dekhne pahochenge jaha aiyega

Anwar Shuoor pakistani poet who writes a four-lined on current affairs daily for the Pakistani Newspaper Jung. Anwar Shuoor is reciting his ghazals for Rekhta.org. انور شعور

Jab koi sath chooth jata hai

Anwar Shuoor pakistani poet who writes a four-lined on current affairs daily for the Pakistani Newspaper Jung. Anwar Shuoor is reciting his ghazals for Rekhta.org. انور شعور

Khuda ka shukr sahare baghair beet gai

Anwar Shuoor pakistani poet who writes a four-lined on current affairs daily for the Pakistani Newspaper Jung. Anwar Shuoor is reciting his ghazals for Rekhta.org. انور شعور

Kiya badalo me safar zidagi bhar

Anwar Shuoor pakistani poet who writes a four-lined on current affairs daily for the Pakistani Newspaper Jung. Anwar Shuoor is reciting his ghazals for Rekhta.org. انور شعور

Main khane jayenge na sanam khane jayenge

Anwar Shuoor pakistani poet who writes a four-lined on current affairs daily for the Pakistani Newspaper Jung. Anwar Shuoor is reciting his ghazals for Rekhta.org. انور شعور

انور شعور

Ittefaq apni jagah khushqismati apni jagah

Anwar Shuoor pakistani poet who writes a four-lined on current affairs daily for the Pakistani Newspaper Jung. Anwar Shuoor is reciting his ghazals for Rekhta.org. انور شعور

Main Bazme Tasawwur Mein Use Laaye Huye Tha

Anwar Shuoor pakistani poet who writes a four-lined on current affairs daily for the Pakistani Newspaper Jung. Anwar Shuoor is reciting his ghazals for Rekhta.org. انور شعور

Meri hayat hai bas raat ke andhere tak

Anwar Shuoor pakistani poet who writes a four-lined on current affairs daily for the Pakistani Newspaper Jung. Anwar Shuoor is reciting his ghazals for Rekhta.org. انور شعور

yaadon ke bagh se wo hara-pan nahin gaya

Anwar Shuoor pakistani poet who writes a four-lined on current affairs daily for the Pakistani Newspaper Jung. Anwar Shuoor is reciting his ghazals at Jashn-e-Rekhta-2015. انور شعور

چمن میں آپ کی طرح گلاب ایک بھی نہیں

انور شعور

فرشتوں سے بھی اچھا میں برا ہونے سے پہلے تھا

انور شعور

مری حیات ہے بس رات کے اندھیرے تک

انور شعور

میرے سینے میں کچھ زیر_و_زبر ہے

انور شعور

ہم اپنے آپ سے بیگانے تھوڑی ہوتے ہیں

انور شعور

یہ مت پوچھو کہ کیسا آدمی ہوں

انور شعور

آڈیو 8

یادوں کے باغ سے وہ ہرا_پن نہیں گیا

ان سے تنہائی میں بات ہوتی رہی

برا برے کے علاوہ بھلا بھی ہوتا ہے

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

متعلقہ شعرا

  • سحر انصاری سحر انصاری ہم عصر
  • امیر قزلباش امیر قزلباش ہم عصر
  • افتخار عارف افتخار عارف ہم عصر
  • اعتبار ساجد اعتبار ساجد ہم عصر
  • انور خلیل انور خلیل ہم عصر
  • غلام محمد قاصر غلام محمد قاصر ہم عصر
  • احمد فراز احمد فراز ہم عصر
  • عدیم ہاشمی عدیم ہاشمی ہم عصر
  • نصیر ترابی نصیر ترابی ہم عصر
  • پیرزادہ قاسم پیرزادہ قاسم ہم عصر

"کراچی" کے مزید شعرا

  • پروین شاکر پروین شاکر
  • آرزو لکھنوی آرزو لکھنوی
  • دلاور فگار دلاور فگار
  • قمر جلالوی قمر جلالوی
  • سلیم کوثر سلیم کوثر
  • عبید اللہ علیم عبید اللہ علیم
  • عذرا عباس عذرا عباس
  • رئیس امروہوی رئیس امروہوی
  • شبنم شکیل شبنم شکیل
  • زہرا نگاہ زہرا نگاہ