Hafeez Merathi's Photo'

حفیظ میرٹھی

1922 - 2000 | میرٹھ, ہندوستان

مقبول عام شاعر، اپنے شعر ’شیشہ ٹوٹے غل مچ جائے۔۔۔‘ کے لیے مشہور

مقبول عام شاعر، اپنے شعر ’شیشہ ٹوٹے غل مچ جائے۔۔۔‘ کے لیے مشہور

غزل 16

اشعار 17

شیشہ ٹوٹے غل مچ جائے

دل ٹوٹے آواز نہ آئے

  • شیئر کیجیے

وہ وقت کا جہاز تھا کرتا لحاظ کیا

میں دوستوں سے ہاتھ ملانے میں رہ گیا

یہ بھی تو سوچئے کبھی تنہائی میں ذرا

دنیا سے ہم نے کیا لیا دنیا کو کیا دیا

  • شیئر کیجیے

ای- کتاب 3

حفیظ میرٹھی فن اور شخصیت

 

1993

حفیظ میرٹھی: حیات اور شاعری

 

2007

شمارہ نمبر-001،002

1957

 

تصویری شاعری 1

لہو سے اپنے زمیں لالہ_زار دیکھتے تھے بہار دیکھنے والے بہار دیکھتے تھے سرور ایک جھلک کا تمام عمر رہا ہوس_پرست تھے جو بار بار دیکھتے تھے کبھی کبھی ہمیں دنیا حسین لگتی تھی کبھی کبھی تری آنکھوں میں پیار دیکھتے تھے چلا وہ دور_ستم گھر میں چھپ کے بیٹھ گئے جو ہر صلیب کو مردانہ_وار دیکھتے تھے

 

شعرا متعلقہ

  • ملک زادہ منظور احمد ملک زادہ منظور احمد ہم عصر
  • عبید صدیقی عبید صدیقی شاگرد
  • جگن ناتھ آزاد جگن ناتھ آزاد ہم عصر
  • عامر عثمانی عامر عثمانی ہم عصر

شعرا کے مزید "میرٹھ"

  • ابو الحسنات حقی ابو الحسنات حقی
  • والی آسی والی آسی
  • اسلم محمود اسلم محمود
  • خورشید طلب خورشید طلب
  • اختر پیامی اختر پیامی
  • ارشد عبد الحمید ارشد عبد الحمید
  • احمد شناس احمد شناس
  • فرحان سالم فرحان سالم
  • انجم لدھیانوی انجم لدھیانوی
  • مظفر ابدالی مظفر ابدالی