Muzaffar Razmi's Photo'

مظفر رزمی

1936 - 2012 | مظفر نگر, انڈیا

اپنے شعر ’ یہ جبر بھی دیکھا ہے تاریخ کی نظروں نے‘ کے لیے مشہور

اپنے شعر ’ یہ جبر بھی دیکھا ہے تاریخ کی نظروں نے‘ کے لیے مشہور

مظفر رزمی

غزل 11

اشعار 9

یہ جبر بھی دیکھا ہے تاریخ کی نظروں نے

لمحوں نے خطا کی تھی صدیوں نے سزا پائی

خود پکارے گی جو منزل تو ٹھہر جاؤں گا

ورنہ خوددار مسافر ہوں گزر جاؤں گا

قریب آؤ تو شاید سمجھ میں آ جائے

کہ فاصلے تو غلط فہمیاں بڑھاتے ہیں

مجھ کو حالات میں الجھا ہوا رہنے دے یوں ہی

میں تری زلف نہیں ہوں جو سنور جاؤں گا

میرے دامن میں اگر کچھ نہ رہے گا باقی

اگلی نسلوں کو دعا دے کے چلا جاؤں گا

کتاب 2

 

ویڈیو 3

This video is playing from YouTube

ویڈیو کا زمرہ
کلام شاعر بہ زبان شاعر
At a Mushaira

مظفر رزمی

Mushaira Urdu Academy Chenni

مظفر رزمی

Reciting own poetry

مظفر رزمی

آڈیو 11

ابھی خاموش ہیں شعلوں کا اندازہ نہیں ہوتا

اس راز کو کیا جانیں ساحل کے تماشائی

خود پکارے_گی جو منزل تو ٹھہر جاؤں_گا

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

متعلقہ شعرا

"مظفر نگر" کے مزید شعرا

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

بولیے